Human Skeleton-انسانی ڈھانچہ

ہڈیوں کا ڈھانچہ کسے کہتے ہیں؟

اگر آپ اپنے بازو کو لچک دیں تو آپ کو معلوم ہوجائے گا کہ  آپ کے بازو کا بیرونی حصہ بہت نرم ہے  لیکن اندر ایک سخت حصہ ہے۔جسے ہڈی کہتے ہیں۔ آپ کے بازوؤں اور پیروں میں ہڈیاں ہیں۔ ہڈیاں آپ کی پیٹھ کے وسط تک جاتی ہیں۔ اور تقریباً جسم کے ہر حصے میں یہ ہڈیاں موجود ہیں ۔ آپ کی یہ سب ہڈیاں مل کر جسم کا ایک ڈھانچہ بناتی  ہیں۔ آپ کے جسم کا یہ ڈھانچہ آپ کے جسم کو مضبوط  رکھتا ہے۔ یہ آپ کے جسم کو اپنی ایک مخصوص شکل دیتا ہے۔ ہڈیاں آپ کے جسم میں بہت سے دیگر اہم کام  بھی کرتی ہیں۔

انسانی جسم میں ہڈیوں کا کردار

بہت سی ہڈیاں آپ کے جسم کے نرم حصوں کی حفاظت کرتی ہیں۔ آپ کے دماغ کی کھوپڑی کی ہڈیاں آپ کے دماغ کی حفاظت کرتی ہیں۔ پسلی کی ہڈیاں آپ کے سینے کے گرد پنجرا بناتی ہیں۔ آپ کی پسلی کا پنجرا آپ کے پھیپھڑوں اور دل کی حفاظت کرتا ہے۔

پٹھوں نے ہڈیوں کو جکڑ اہوا ہے۔ پٹھوں کو حرکت دینے کے لیےآپ کی ہڈیاں مددکرتی  ہیں۔ پٹھےاور ہڈیاں ایک ساتھ آپ کو کھڑے ہونے ، بیٹھنے اور چلنے پھرنے  کے لیے مددیتی ہیں۔

خون ہڈیوں کے مرکز میں ہوتا ہے۔ ہڈی کا درمیانی حصہ ایک خاص گودے سے بھرا ہتا ہے جسے انگریزی میں بون میرو کہتے ہیں۔ یہ  بہت ہی نرم ہوتا  ہے۔ سرخ اور سفید خون کے خلیے بون میرو کے ذریعہ بنتے ہیں۔ خون کے سرخ خلیے آپ کے جسم کے تمام حصوں میں آکسیجن لے جاتے ہیں۔ سفید خون کے خلیے آپ کے جسم کو جراثیم سے لڑنے میں مدد کرتے ہیں۔

کان کے اندر تین ہڈیاں ہوتی ہیں جو آپ کو سننے میں مدد دیتی ہیں۔جو بہت چھوٹی چھوٹی ہوتی ہیں ان میں سے ایک ہڈی اسٹروپ ہڈی کہلاتی ہے۔ یہ آپ کے جسم کی سب سے چھوٹی ہڈی ہے۔

Brain and Nervous System-اعصابی نظام

ہڈیاں کتنی قسم کی ہوتی ہیں؟

ہڈی دو طرح کی ہوتی ہے۔ ایک قسم کو کمپیکٹ ہڈی اور دوسری کو سپونجی ہڈی کہا جاتا ہے۔ کمپیکٹ ہڈی کا باہروالا حصہ سخت اور ہموار ہوتا ہے۔ آپ کے بازوؤں اور پیروں کی لمبی لمبی ہڈیوں میں بہت ساری کمپیکٹ ہڈیاں ہیں۔ سپونجی ہڈی عام طور پر کمپیکٹ ہڈی کے نیچے ہوتی ہیں۔ سپونجی ہڈی بازو اور ٹانگوں کی ہڈیوں کے اختتام پر ہوتی ہیں۔

آپ کےجسم کے ڈھانچے میں کارٹلیج بھی ہے۔ کارٹلیج ہڈی کی طرح ہے لیکن نرم ہے۔ یہ آسانی سے جسم کےکسی حصے کو موڑنےکے کام آتی  ہے۔  مثال کے طور پر آپ کی ناک کی نوک پر اور آپ کے کان کے بیرونی حصے میں کارٹلیج  ہڈیاں ہیں ۔

جوڑ کِسے کہتے ہیں؟

جوڑ وہ جگہیں ہیں جہاں دو یا دو سے زیادہ ہڈیاں ملتی ہیں۔ زیادہ تر ہڈیوں کو جوڑنے میں ایک دوسرے کے ساتھ باندھ دیا جاتا ہے جس کو سخت بینڈ کہتے ہیں جنھیں لیگامینٹ کہتے ہیں۔

مختلف قسم کے جوڑ آپ کو مختلف طریقوں سے آگے بڑھنے  چلنے پھرنے میں مدددیتے ہیں۔ اپنے بازو کو اوپر نیچے حرکت دیں جس جگہ سے بازو اکٹھا ہو جاتا ہے اور آسانی سے مڑ جاتا ہے اسے کہنی کہا جاتا ہے۔ آپ کی کہنی ایک دروازے کے  قبضہ کی طرح کام کرتی ہے۔ اب اپنے کندھے سے اپنے بازو کو چاروں طرف گھمائیں آپ کے کندھے کا ایک جوڑ جو بال اور ساکٹ کا مشترکہ  ہے اور آپ کو اپنے بازو کو کئی سمتوں میں منتقل کرنے دیتا ہےاسے کندھا کہتے ہیں۔

آپ کی کھوپڑی بہت سی ہڈیوں سے بنی ہے جو حرکت نہیں کرتی ہیں۔

What is cell خلیات?

ہڈیوں کی بڑھوتری کیسے ہوتی ہے؟

جب تک انسان زندہ رہتا ہے تو ہڈیوں میں بڑھوتری ہوتی رہتی ہے اورتبدیلی ہوتی رہتی ہے۔ ہمارے سر اورڈھانچے کے دوسرے حصوں میں پیدائش کے وقت بہت زیادہ کارٹلیج ہوتی ہے۔

قدآور ہونے کے ساتھ ساتھ ہڈیاں بہت مضبوط  ہوتی جاتی ہیں۔ نوعمر میں ہڈیاں بڑھتی رہتی ہیں۔لیکن کچھ عمر میں جاکریہ ہڈیاں لمبا ہونا بند ہوجاتی ہیں ۔

عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ کچھ ہڈیاں آپس میں مل جاتی ہیں۔ جب بچہ پیدا ہوتا ہے تو جسم میں 300 سے زائد ہڈیاں ہوتی ہیں۔ ایک بالغ انسان میں 206 ہڈیاں ہیں۔ بالغوں میں لمبی اور مضبوط ترین ہڈی ران کی ہڈی ہوتی ہے۔جو انسان کی ٹانگ میں ہوتی ہے۔

ہڈیوں کی افزائش بند ہونے کے بعد بھی ایک وقت میں تھوڑی سی تبدیلی آتی ہے۔ یہ تبدیلی جب تک آپ زندہ رہیں گے تب تک جاری رہتی ہے۔ آپ کے جسم کو ہڈیوں کو مضبوط رکھنے کے لئے کیلشیم نامی معدنیات کی ضرورت ہے۔ دودھ میں بہت ساری کیلشیم ہے۔دوڑ اور دوسری ورزش  ہڈیوں کو مضبوط بنانے میں بھی مدد کرتی ہیں۔ کچھ بوڑھے افراد کی ہڈیاں پتلی اور  کمزور ہوتی ہیں۔ ان کی ہڈیاں آسانی سے ٹوٹ سکتی ہیں۔ ورزش  سے ہڈیوں میں کیلشیم پیدا ہوتی ہے جو ہڈیوں کو کمزور اور پتلی ہونے سے بچانے میں مدد فراہم کرتا ہے۔

ہڈیاں کیسے ٹوٹتی ہیں؟

بعض اوقات لوگوں میں ہڈیاں ٹوٹ جانے والے حادثات ہوتے ہیں۔ ہوسکتا ہے کہ کوئی شخص درخت سے گر پڑے یا سیڑھیوں سے۔ بعض اوقات فٹ بال کے کھلاڑی یا دوسرے کھلاڑی جب کھیل کھیل رہے ہوں تو چوٹ لگنے سے ہڈیاں ٹوٹ سکتی ہیں۔

Reproduction-افزائش نسل

ڈاکٹر کو ٹوٹی ہوئی ہڈی کو ٹھیک کرنا ہوتا ہے۔ پہلے ٹوٹی ہوئی کا ایکسرے کیا جاتا ہے اور پھر وہ ایکسرے ڈاکٹر کو دکھایا جاتا ہے  کہ ہڈی کے ٹوٹے ہوئے ٹکڑے کس طرح نظر آتے ہیں۔ اس کے بعد ڈاکٹر ہڈی کے ٹوٹے ہوئے حصوں کو ایک ساتھ جوڑتا ہے اور پھر اسے مضبوطی سے باندھ دیتاہے اس عمل کو ہڈی ترتیب دینا کہتے ہیں۔ کبھی کبھی ٹوٹی ہوئی ہڈی کو تاروں یا پنوں کے ساتھ جوڑا جاتاہے ۔

ایک ٹوٹی ہوئی ہڈی کا استعمال اس وقت تک نہیں کرنا چاہئے جب تک کہ وہ ٹھیک نہ ہوجائے۔ اور پھر آہستہ آہستہ نئی ہڈی بڑھنے لگتی ہے۔ ٹکڑے ایک ساتھ بڑھتے ہیں اور ٹوٹی ہوئی ہڈی کو بھر دیتے ہیں۔

Post a Comment

0 Comments